Infertility in Women زنانہ بانجھ پن

بانجھ پن (infertility)

اگر کوئی عورت کسی وجہ سے حاملہ نہ ہو تو ایسی حالت کو بانجھ پن کہتے ہیں
بانجھ پن کو ئی مرض نہیں ہے بلکہ علامت ہے اس بات کی  کہ میاں بیوی میں سے کسی ایک کی جنسی صحت اچھی نہیں جس کی وجہ سے وہ حالات پیدا ہوسکے
رحم مادر میں استقرار حمل کا نا ہونا۔ بانچھ پن ایک غیر طبعی کیفیت ہے، جس کےمتعدد اسباب ہیں۔

جیسے امراض رحم کا ہونا یا رحم کے اندر انٹی باڈی کا ہونا جس کی وجہ سے رحم کے اندر نطفہ قبول کرنے کی استداد نہیں رہتی۔

حاملہ ہونا اس قدر پیچیدہ عمل ہے کہ ماہواری کے ایک چکر میں حاملہ ہونے کی بجائے نہ ہونے کے امکانات کہیں زیادہ ہوتے ہیں۔
حتیٰ کہ اگر صحت مند جوڑے بھی باقاعدگی سے انٹر کورس کریں مانع حمل ادویات استعمال کیے بغیر، تو بھی ایک ماہواری سے اگلی ماہواری
تک حمل ہونے کے امکان 25فیصد سے زیادہ نہیں ہوتے۔
بے اولادی کا جب بھی ذکر آئے تو ہمارے ذہنوں میں یہی خیال آتا ہے کہ اس کی وجہ عورت ہے۔
جب کہ یہ ہرگز ضروری نہیں کہ بے اولادی کی وجہ صرف عورت ہی ہو، موجودہ دور میں میرا ذاتی مشاہدہ ہے کہ بے اولادی کے اکثر مسائل کی وجہ مرد ہیں

شادی کے ایک سال تک عورت کا حاملہ نہ ہونا بانجھ پن کہلاتا ہے اس کا سبب عورت یا مرد یا دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔
بانجھ پن ایک علامت ہے مرض نہیں بلکہ یہ مرض یا کئی امراض کی طرف اشارہ کرتا ہے۔
جن کی بنیاد پر یہ علامت پیدا ہوتی ہے۔عورت اور مرد میں اولاد پیدا کرنے والے نظام کو تولیدی نظام کہا جاتاہے۔
زنانہ اور مردانہ نظام تولید میں نقض بانجھ پن کا سبب بنتاہے۔
حمل قرار پانے کے لیے مرد کے مادہ منویہ میں سپرم کا ہونا ضروری ہے جبکہ عورت میں بیضہ کا پیدا ہونا ضروری ہے
مرد اور عورت کا انزال بیک وقت ضروری نہیں عورت اگر فارغ نہ بھی ہو تب بھی حمل قرار پا جاتا ہے۔
حمل کے لیے مرد کے ما دہ تولید کا عورت کے رحم میں داخل ہونا ضروری ہے۔سپرم انڈے کو چوبیس گھنٹے سے ایک ہفتے تک کسی بھی وقت کر سکتا ہے

بانجھ پن (infertility)علامات

حاملہ نا ہونا ،رحم کا چھوٹا ہونا،فاسد ماہواری، موٹاپا،ہار مونز کی کمی بیشی،حیض کا نہ آنا،حیض کا کم آنا،حیض کا معمول سے زیادہ آنا، مرد کے جراثیم کا نا ہونا

 

عورت میں بانجھ پن کی اہم وجوہات یہ ہیں

قبل ازوقت حیض کی بندش،انڈوں کی افزائش نہ ہونا،عورت کے اندرجرثوموں کی مخالف اینٹی باڈیز کا پیدا ہوجانا۔ہارمونز کا عدم توازن،خصیۃ الرحم(اووریز)کا پیدائشی طورپر نہ ہونا
قاذفین (فلوپئین ٹیوب)کا نہ ہونا،بہت زیادہ کمزوری اور لاغری،
رحم(بچہ دانی uterus)کاپیدائشی طورپر نہ ہونا،بیضے بننے کے عمل میں بے قاعدگیاں۔رحم کا ٹل جانا،بچّہ دانی سے خارج ہونے والی خلافِ معمول رطوبت،بچّہ دانی کے اندر رسولی ہونا،مُٹاپے کی وجہ سے انڈوں کے اخراج کا عمل درست طور پر نہ ہونا،آپریشن یا انفکشن کے بعد نَلوں کا ضائع ہوجانا۔

بانجھ پن کا علاج

اگر شادی کے بعد عورت  مسلسل 4 ماہ سے حاملہ نہیں ہو رہی

یا ماہواری میں پرابلم آ رہی ہو تو اپنے معالج سے مشورہ کریں

 

کیونکہ اس مر ض کی بہت سی وجوہات ہوتی ہیں ان تمام امور کو مد نظر رکھنا پڑھتا ہے اسباب کے مطابق علاج کیا جاتا ہے لہذا اپنے معالج کی ہدایات کے مطابق علاج کریں۔

Infertility

Absence of pregnancy in the womb. Infertility is an unnatural condition, for a number of reasons.
For example, the presence of toxins in a woman, incontinence or any other reason for not being able to accept the fetus.
Pregnancy is such a complex process that the chances of not getting pregnant are much higher than in one menstrual cycle.
Even if healthy couples intercourse regularly without using contraceptives, from one menstrual period to the next.
The chances of getting pregnant are not more than 25%.
Whenever infertility is mentioned, the only thing that comes to our mind is that it is caused by a woman.
While it is not necessary for women to be the only cause of infertility, my personal observation in the present age is that most of the problems of infertility are caused by men.

A woman’s inability to conceive for one year after marriage is called infertility. It can be caused by a woman or a man or both.
Infertility is a symptom not a disease but it refers to a disease or many diseases.
On the basis of which this symbol is formed. The system that produces children in a woman and a man is called reproductive system.
Violations of the female and male reproductive system cause infertility.
In order for a pregnancy to take place, a man’s sperm must contain sperm, while a woman must produce an egg.
Ejaculation of a man and a woman is not necessary at the same time. A woman is considered pregnant even if she is not free.
For pregnancy, the male reproductive system must enter the woman’s uterus. The sperm can lay an egg at any time from 24 hours to a week.

Reasons

These are the main causes of infertiality in women
Premature menopause
No egg production
The production of antibodies against germs in a woman.
Hormonal imbalance
Abnormality of the uterus (ovaries)
Absence of fallopian tubes
Too much weakness and emaciation
Uterus is not congenital
Irregularities in the process of ovulation.
Avoidance of mercy
Abnormal secretions from the uterus
Having a tumor inside the uterus
Obesity does not result in proper ovulation
Loss of tubes after surgery or infection.

Symptoms

The biggest sign is not having children

No menstruation

Decreased menstruation

Menstrual cramps

Treatment

Women's Diseases

Add Your Heading Text Here

Azoospermia سپرم کا نہ ہونا

 سپرم کیا ہے؟

سپرم (حونیہ منویہ) میں ایک موٹاسر، پتلی گردن و لمبی دم دکھائی دیتی ہے سر سے دم تک کرم کی لمبائی 1/500 انچ ہوتی ہے سر نوکدار جس کے ذریعے عورت کے انڈے(بیضہ انثی) کے غلاف کے اندر گھس جاتا ہے ان اجسام منویہ کو طب جدید میں سپرم یا سپرمےٹوزوایا اور اردو میں حونیات منی کہتے ہیں۔

 

سپرم کی کام اور تیاری

بلوغت کی عمر میں ایف ایس ایچ اور ٹیسٹوسٹیرون کے زیرِ اثر سیمنی فیرس ٹیوبولز کے خلیوں میں سپرم پیدا ہونا شروع ہو جاتے ہیں اور ایپی ڈیڈیمس اور دیگر نالیوں میں پینس کے ذریعے جسم سے خارج ہوتے ہیں، سپرم سیمینل ویسکلز سے خارج ہونے والی لیس دار رطوبت میں زندہ اور متحرک رہتے ہیں، مباشرت کے دوران منی کے ذریعے سپرم مرد سے عورت کے جسم میں داخل ہوتے ہیں، سپرم کے اگلے سرے پر ایکروسم ہوتا ہے جس کے ذریعے سپرم عورت کے اووم کی جھلی میں راستہ بنا کر داخل ہو جاتا ہے۔

 

ایزوسپرمیزم (Azoospermia)

مادہ منویہ میں تولیدی جراثیم یعنی سپرم سے مرد محروم ہوتا ہے
.اور باوجود مادہ کی موجودگی اور ایستادگی اور جماع بالکل درست ہونے کے باوجود اولاد پیدا نہیں کر سکتا ہے

حمل کے لئے کتنے سپرمز ہونے چاہئیں

عام آدمی کے سیمن (منی) میں، جس کی کل مقدار ایک سے پانچ ملی لٹر تک ہوتی ہے، سپرمز کی فی ملی لٹر تعداد پچاس سے ساٹھ ملین یا اس سے بھی زیادہ ہو سکتی ہے۔ تاہم حمل کے لئے سپرمز کی کم سے کم تعداد پندرہ سے بیس ملین فی ملی لٹر ہونی چاہیے۔ اس میں بھی کم از کم پچاس فیصد یا اس سے زیادہ سپرمز ایکٹیو حالت میں ہونے چاہئیں ورنہ حمل ٹہرنے کے امکانات کم ہو جاتے ہیں۔ ان ایکٹیو سپرمز میں بھی شکل و صورت
کے اعتبار سے کوئی نقص نہیں ہونا چاہیے۔ ویسے ان لاکھوں کرڑوں سپرمز میں سے صرف ایک ہی سپرم اس قابل ہوگا کہ اپنی منزل مقصود تک پہنچ کر ایگ کو بارآور کر سکے۔

سیمن (منی ) میں سپر م کا نہ ہونا کہلاتا ہے۔Azoospermia

کا سب سے بڑاسبب انفیکشن جس کی وجہ سے منی میں پیپ کا آنا خون کے سرخ زرات کا آناAzoospermia
بیکٹیریا وغیرہ کی موجودگی ہے۔
خصیوں میں پیدائشی نقص ہونا ،ہارمون لیول نارمل نہ ہونا،خصیوں کاانفیکشن اورتیز بخار بھی اسکی وجہ بنتاہے
اکثرخصیے اور عضو تناسل کے درمیان نالیا ں بند ہونے کی بھی وجہ ہوتی ہے۔
اکثر اوقات منی میں سپرم موجود تو ہوتے ہیں لیکن وہ زندہ نہیں ہوتے اور مردہ ہونے کے باعث وہ اس قابل نہیں رہتے کہ حمل قرار پائے۔

اسباب

موٹاپہ،ڈپریشن،تمباکو نوشی،زیادہ دیر انفیکشن رہنا،ریڈی ایشن اور کیمیکلز کی اثرات،خصیوں میں زخم یا سوجن،موروسی،جسم میں حد سے زیادہ گرمی،آپریشن یا چوٹ،جسمانی معذوری
مختلف ادویات کے مضر صحت اثرات،نشہ آور اشیاء کا استعمال،سوزش یا درجہ حرارت میں اضافہ،ٹیسٹیکلز میں خون کی روانی کا متاثر ہونا،گلے کے غدود میں سوزش،منی میں پس کی موجودگی

علامات

جسمانی معذوری

معائنہ جوہر حیات (Semen Analysis)

سیمن سپرم رپورٹ کو درج ذیل  طریقے سے آسانی سے سمجھا جاسکتا ہے

 

میڈیکل لیبارٹری میں مادہ منویہ کی

جانچ  پڑتال کے طریقے میں

مادہ منویہ میں پائے جانے والے نقائص اور حمل نہ ہونے کی وجوہات اور جراثیم کی صورتحال کا جائزہ لیا جاتا ہے

مادہ منویہ کا سیمپل دینے سے پہلے اس بات کا خیال رکھنا ضروری ہے کے احتلام یا ہمبستری سے کم ازکم پانچ سے سات دن کا وقفہ ہونا ضروری ہے

تاکہ اس کا مطلوبہ والیم پورا ہوجائے ۔

لیبارٹری میں سیمپل دینے کے بعد اس کو C ڈگری سینٹی گریڈ  کے درجہ حرارت میں 30 منٹ تک محفوظ رکھا جاتا ہے 37

 

Gross Examination

لیبارٹری میں سیمپل دینے کے بعد سیمن

  کے درجہ C 37  ڈگری سینٹی گریڈ

 حرارت میں 30 منٹ تک محفوظ رکھا جاتا ہے

 

مقدار /Volume 

سب سے پہلے سیمن کے والیم یعنی حجم کو دیکھا جائے گا یعنی کے ایک صحت مند آدمی کے مادہ منویہ کا والیم  (5 ) ملی لیٹر نارمل مقدار ہوتا ہے

 

 رنگت /Colour

رنگت کے اعتبار سے مادہ منویہ کریمی وائٹ رنگ کا ہونا چاہیے

 

ماہیت/Consistency

ماہیت کے اعتبار سے پتلا نہیں ہونا چاہیے بلکہ گاڑا ہونا چاہیے مگر بہت زیادہ گاڑھا بھی نہیں

 

اس کے بعد دوسرا حصہ Microscopic Examination

 

Total Sperm Count

ان کی نارمل مقدار ایک صحت مند آدمی کے مادہ منویہ کے اندر

ہوتی ہے (150-60Million /ML)

اس کے بعد ٹوٹل سپرم  کاؤنٹ میں سے اس کے اندر زندہ’ نیم مردہ’  اور مردہ سپرم دیکھے جاتے ہیں

 

 زندہ سپرم /Active 

ان کی نارمل مقدار 40 فیصد سمجھی جاتی ہے اس سے کم مقدار مرض کی علامت ہے

 

نیم مردہ سپرم / Sluggish

ان کو نیم مردہ اس لئے کہا جاتا ہے کیوں کہ یہ زندہ ہیں مگر اپنی جگہ سے حرکت نہیں کرتے وہی اپنی جگہ پر اپنے ہاتھ پاؤں مارتے رہتے ہیں

(اپنا سر یا دم ہلاتے رہتے ہیں )

 

مردہ سپرم / Dead Sperm

 کچھ سپرم بالکل حرکت کرنے کے قابل نہیں ہوتے ان کو مردہ کہا جاتا ہے

 

منی میں پس /Pus Cells

 مادہ منویہ میں خون کے سفید ذرات کا آنا انفیکشن کہلاتا ہے

اور ان سفید ذرات کو پس سیلز کہتے ہیں ۔  پس سیل کا زیادہ مقدار میں آنا زندہ سپرمز  کی صحت پہ بہت ناگزیر اثر ڈالتے ہیں

ان کی نارمل مقدار 1 سے 2 سیل ہوتی ہے

زیادہ تعداد میں ہونا بہت نقصان  دہ ثابت ہوتا ہے ۔

 

خون کے سرخ ذرات/ RBCs

مادہ منویہ میں خون کے سرخ ذرات کا موجود ہونا بھی کافی بڑھی انفیکشن کا سبب ہوتا ہے ۔

عام روٹین میں اس کی نارمل مقدار زیرو (00)  ہوتی ہے

علاج

Azoospermia

What is sperm?

Sperm has a thick, slender neck and long tail. The length of the worm from head to tail is 1/500 inch. The pointed head through which it penetrates inside the shell of a woman’s egg (ovum). Sperm or spermatozoa are called sperm in modern medicine and honiyat sperm .

Sperm work and preparation
During puberty, under the influence of FSH and testosterone, sperm begin to be produced in the cells of the seminiferous tubules and are excreted from the body through the penis in the epididymis and other vessels. They remain alive and active in the vagina. During sexual intercourse, sperm enters the female body from the male through the semen. ۔


Azoospermia
In sperm, the man loses the reproductive germ, the sperm
And in spite of the presence of the substance and the erection and intercourse being perfectly correct, it cannot produce children


How many sperms should there be for pregnancy?

In the common man’s semen, which has a total volume of one to five milliliters, the number of sperms per milliliter can be fifty to sixty million or more. However, the minimum number of sperms for pregnancy should be 15 to 20 million per milliliter. In this case, at least 50% or more of the sperms should be active, otherwise the chances of getting pregnant are reduced. Even in these active sperms
There should be no error. By the way, out of these millions of millions of sperms, only one sperm will be able to reach its destination and fertilize the egg.
More about this source textSource text required for additional translation information
Send feedback
Side panels


 

Reasons

Physical disability
Side effects of various medicines
Mental stress
obesity
Operation or injury
Effects of radiation and chemicals
Inflammation or fever
Drug use
Affected blood flow to the testicles
Inflammation of the throat glands
Presence of semen in semen

Risk Factors

Obesity
Depression
smoking
Prolonged infection
Effects of radiation and chemicals
Wounds or swelling in the testicles
Morosi
Excessive body heat
Operation or injury
Physical disability
Side effects of various medicines
Drug use
Inflammation or fever
Affected blood flow to the testicles
Inflammation of the throat glands
Presence of semen in semen

Treatment

Men's Diseases

Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin

Male Infertility مردانہ بانجھ پن

حکماء قدیم وجدید نے مادہ تو لید کو حرارت عز یزی رطوبت عزیزی اور طبعی روح کا لطف مرکب کہا ہے ۔ یہ گا ڑھی سفیدی مائل رطوبت ہے جس میں ایک خاص بوہوتی ہے ۔ لہون ہک وہ پہلا سائنسدان تھا جس نے سب سے پہلے منی میں کرم منی کو دریافت کیا تھا ۔ 

یہی وہ کرم منی ہیں جو اولاد پیدا کرنے کی حثیت پیدا کر تے ہیں ۔ جن مردوں کی منی میں یہ کرم کمزور، کم ،یا سرے سے موجود ہی نہ ہو ں ان کے ہاں اولاد نہیں ہوتی ۔ ایسے حالات کو مردانہ بانجھ پن کہتے ہیں ۔

شادی کے ایک سال تک عورت کا حاملہ نہ ہونا بانجھ پن کہلاتا ہے اس کا سبب عورت یا مرد یا دونوں ہی ہو سکتے ہیں۔

بانجھ پن ایک علامت ہے مرض نہیں بلکہ یہ مرض یا کئی امراض کی طرف اشارہ کرتا ہے۔

جن کی بنیاد پر یہ علامت پیدا ہوتی ہے۔عورت اور مرد میں اولاد پیدا کرنے والے نظام کو تولیدی نظام کہا جاتاہے۔

زنانہ اور مردانہ نظام تولید میں نقض بانجھ پن کا سبب بنتاہے۔

حمل قرار پانے کے لیے مرد کے مادہ منویہ میں سپرم کا ہونا ضروری ہے جبکہ عورت میں بیضہ کا پیدا ہونا ضروری ہے

مرد اور عورت کا انزال بیک وقت ضروری نہیں عورت اگر فارغ نہ بھی ہو تب بھی حمل قرار پا جاتا ہے۔

حمل کے لیے مرد کے ما دہ تولید کا عورت کے رحم میں داخل ہونا ضروری ہے۔سپرم انڈے کو  چوبیس گھنٹے سے ایک ہفتے تک  کسی بھی وقت کر سکتا ہے

معائنہ جوہر حیات (Semen Analysis)

سیمن سپرم رپورٹ کوآسانی سے سمجھا جاسکتا ہے

میڈیکل لیبارٹری میں مادہ منویہ کی

جانچ  پڑتال کے طریقے میں

مادہ منویہ میں پائے جانے والے نقائص اور حمل نہ ہونے کی وجوہات اور جراثیم کی صورتحال کا جائزہ لیا جاتا ہے

مادہ منویہ کا سیمپل دینے سے پہلے اس بات کا خیال رکھنا ضروری ہے کے احتلام یا ہمبستری سے کم ازکم پانچ سے سات دن کا وقفہ ہونا ضروری ہے

تاکہ اس کا مطلوبہ والیم پورا ہوجائے ۔

لیبارٹری میں سیمپل دینے کے بعد اس کو C ڈگری سینٹی گریڈ  کے درجہ حرارت میں 30 منٹ تک محفوظ رکھا جاتا ہے 37

Gross Examination

لیبارٹری میں سیمپل دینے کے بعد سیمن

  کے درجہ C 37  ڈگری سینٹی گریڈ

 حرارت میں 30 منٹ تک محفوظ رکھا جاتا ہے

مقدار /Volume 

سب سے پہلے سیمن کے والیم یعنی حجم کو دیکھا جائے گا یعنی کے ایک صحت مند آدمی کے مادہ منویہ کا والیم  (5 ) ملی لیٹر نارمل مقدار ہوتا ہے

 رنگت /Colour

رنگت کے اعتبار سے مادہ منویہ کریمی وائٹ رنگ کا ہونا چاہیے

ماہیت/Consistency

ماہیت کے اعتبار سے پتلا نہیں ہونا چاہیے بلکہ گاڑا ہونا چاہیے مگر بہت زیادہ گاڑھا بھی نہیں

اس کے بعد دوسرا حصہ Microscopic Examination

Total Sperm Count

ان کی نارمل مقدار ایک صحت مند آدمی کے مادہ منویہ کے اندر

ہوتی ہے (150-60Million /ML)

اس کے بعد ٹوٹل سپرم  کاؤنٹ میں سے اس کے اندر زندہ’ نیم مردہ’  اور مردہ سپرم دیکھے جاتے ہیں

 زندہ سپرم /Active 

ان کی نارمل مقدار 40 فیصد سمجھی جاتی ہے اس سے کم مقدار مرض کی علامت ہے

نیم مردہ سپرم / Sluggish

ان کو نیم مردہ اس لئے کہا جاتا ہے کیوں کہ یہ زندہ ہیں مگر اپنی جگہ سے حرکت نہیں کرتے وہی اپنی جگہ پر اپنے ہاتھ پاؤں مارتے رہتے ہیں

(اپنا سر یا دم ہلاتے رہتے ہیں )

مردہ سپرم / Dead Sperm

 کچھ سپرم بالکل حرکت کرنے کے قابل نہیں ہوتے ان کو مردہ کہا جاتا ہے

منی میں پس /Pus Cells

 مادہ منویہ میں خون کے سفید ذرات کا آنا انفیکشن کہلاتا ہے

اور ان سفید ذرات کو پس سیلز کہتے ہیں ۔  پس سیل کا زیادہ مقدار میں آنا زندہ سپرمز  کی صحت پہ بہت ناگزیر اثر ڈالتے ہیں

ان کی نارمل مقدار 1 سے 2 سیل ہوتی ہے

زیادہ تعداد میں ہونا بہت نقصان  دہ ثابت ہوتا ہے ۔

خون کے سرخ ذرات/ RBCs

مادہ منویہ میں خون کے سرخ ذرات کا موجود ہونا بھی کافی بڑھی انفیکشن کا سبب ہوتا ہے ۔

عام روٹین میں اس کی نارمل مقدار زیرو (00)  ہوتی ہے

اسباب

پیدائشی بانجھ پن،نامردی،سرعت انزال،سوزاک،کن پیڑے آتشک،خون کی نالیوں میں بندش،خون کی مسلسل کمی ،فوطوں میں پانی،گردوں میں سوزش،کثرت جماع،اغلام بازی،مشت زنی،احتلام کی کثرت،جریا ن منی کی کثرت،یرقان،غدہ قدامیہ اور اوعدیہ منی کے امرا ض،ٹائیفائیڈ بخار، گلٹیاں ،غدود،بار بار ایکسرے دوران ماہواری جماع،خواب آور ادویات کا استعمال،اینٹی باءو یٹیک کا استعمال، وقتی امساک کی ایلو پیتھک ہومیوپیتھک ہائی پو ٹینسی ادویات کا استعمال، لنکو مائی سن،سٹیرائیڈ ادویات، فائی سک،ویبرامائی سن،یرگنال انجکشن ٹسٹو ویران پروفینی منشیات کا استعمال،شنگرف سنکھیا اورسیسہ کا استعمال شدید صدمات سے دوچار رہنا،مالی پریشانی جس میں متوازن غذا کا معاملہ میسر نہ آنا۔ نفسیاتی امراض۔مرد کے جنسی امراض سپرم کی کمی یا سپرم کی عدم موجودگی۔خصیوں پر چوٹ آنا,مرد کا صحبت کے قابل نہ رہنا۔
,پس سلز,باڈی بلڈنگ کے لیے ادویات کا استعمال
۔Lump نالی میں گرہ لگنا۔

علاج

:سب سے پہلے سبب دریافت کریں پھر اس

کے مطابق علاج کریں

منی میں اگر پس سیل ہوں تو پہلے پس کا علاج کریں

اگر سبب کمزوری کا ہو تو نفس پر طلا کریں اور مقوی باہ ادویات استعمال کریں

 

:نسخہ سپرم کی کمی 

Male Infertility

These are the semen that creates the status of having children. Men whose semen is weak, inferior, or not present at all do not have children. Such conditions are called male infertility.
A woman’s inability to conceive for one year after marriage is called infertility. It can be caused by a woman or a man or both.
Infertility is a symptom not a disease but it refers to a disease or many diseases.
On the basis of which this symbol is formed. The system that produces children in a woman and a man is called reproductive system.
Violations of the female and male reproductive system cause infertility.
In order for a pregnancy to take place, a man’s sperm must contain sperm, while a woman must produce an egg.
Ejaculation of a man and a woman is not necessary at the same time. A woman is considered pregnant even if she is not free.
For pregnancy, the male reproductive system must enter the woman’s uterus. The sperm can lay an egg at any time from 24 hours to a week.

Symptoms

Causes of male infertility

Congenital infertility, impotence, premature ejaculation, gonorrhea, syphilis, blood vessel blockage, persistent anemia, water in the stools, inflammation of the kidneys, excessive intercourse, promiscuity, masturbation, excessive sleep, semen Frequency of jaundice, conjunctivitis and sepsis, typhoid fever, glands, glands, menstrual intercourse during repeated X-rays, use of sleeping pills, use of antibiotics, use of antibiotics, temporary aloe vera homeopathic hypertension Use of Lincoln MySun, Steroid Medications, FiSec, VibramySun, Ergonal Injection, Testosterone, Profin Drugs, Shangarf Archive and Lead Lead to Severe Trauma, Financial Trouble with Unavailability of a Balanced Diet.

Treatment

Men's Diseases

Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin